بلیک بیری کی دھماکے دار واپسی

معروف موبائل فون ساز کمپنی ’بلیک بیری‘ کے موبائل فونز کو ڈیٹا سکیورٹی کے حوالے سے محفوظ ترین خیال کیا جاتا تھا لیکن 2010ءمیں وکی لیکس کے انکشافات نے کمپنی کی ساکھ کو شدید نقصان پہنچایا۔ وکی لیکس نے انکشافات کیے تھے کہ امریکہ بلیک بیری سروس کی بھی نگرانی کرتا رہا ہے۔ اس کے بعد دنیا بھر میں بلیک بیری موبائل فونز کی خریداری میں غیرمعمولی کمی واقع ہو گئی اور کمپنی خاتمے کے قریب پہنچ گئی۔ اب بلیک بیری کمپنی نے ایک نئے موبائل فون کے ساتھ دوبارہ عالمی مارکیٹ میں قدم رکھ دیا اور اپنے اس ماڈل کو دنیا کا سب سے محفوظ ترین سمارٹ فون قرار دے رہی ہے۔

برطانوی اخبار ڈیلی سٹار کی رپورٹ کے مطابق اس ماڈل کا نام (ڈی ٹی ای کے ففٹی )ہے

جو اینڈرائیڈ پاورڈ فیچرز کا حامل سمارٹ فون ہے۔

اگرچہ بنیادی طور پر اس میں اینڈرائیڈ آپریٹنگ سسٹم موجود ہے تاہم اس میں کئی منفرد ٹولز بھی شامل کیے گئے ہیں جن میں فل ڈسک انکرپشن اور ریپڈ سکیورٹی پیچنگ شامل ہیں۔

رپورٹ کے مطابق اس فون میں بلیک بیری کے مشہور کی بورڈ کی بجائے5.2انچ ٹچ سکرین نصب کی گئی ہے۔اس کے علاوہ اس میں سنیپ ڈریگن 617پروسیسر، 3جی بی ریم (RAM) اور 16جی بی سٹوریج یا میموری رکھی گئی ہے۔ اس کی سٹوریج کومائیکروایس ڈی کارڈ کے ذریعے 2ٹیرا بائٹ تک بڑھایا جا سکتا ہے۔بلیک بیری کے اس DTEK50ماڈل میں 13میگا پکسل آٹو فوکس ریئر کیمرہ اور 8میگاپکسل فرنٹ کیمرہ شامل ہے۔ اس کی بیٹری 2610ملی امپیئر آور(mAh)طاقت کی حامل ہے۔یہ فون برطانیہ کی مارکیٹ میں آج سے 275پاﺅنڈ (تقریباً 37ہزار 864روپے) میں دستیاب ہے۔ رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ بلیک بیری جلد دو مزید اینڈرائیڈ سمارٹ فون بھی متعارف کروانے جا رہی ہے۔ ان ماڈلز کے کوڈ نام آرگون (Argon)اور مرکری(Mercury)ہیں۔ بلیک بیری نے اینڈرائیڈ تو متعارف کروا دیا ہے مگر پاکستانی اس سے مستفید نہیں ہو سکیں گے کیونکہ بلیک بیری دسمبر 2015ءمیں پاکستان میں اپنی سروس بند کر چکی ہے۔ پاکستانی حکومت نے بلیک بیری سے صارفین کے ڈیٹا تک رسائی مانگی تھی جس سے انکار پر اسے اپنی سروس بند کرنے کا حکم دے دیا گیا تھا۔

تبصرے

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں