فتح‌جنگ: عید منانے کے لیے آبائی علاقوں‌کو روانگی ، فتح‌جنگ بین الصوبائی شاہراہ پر بدترین ٹریفک جام

عید الاضحی کی چھٹیاں ہوتے ہی پردیسی گھروں کو چلے تو بین الصوبائی جنگشن فتح جنگ میں ٹریفک کا بدترین جام دیکھنے میں آیا – دن بھر گاڑیوں کی لمبی لائینں لگی رہیں – سکولوں سے چھٹی کے بعد طلبا و طالبات بھی گھروں کو وقت پر نہ جا سکے- والدین کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑا- چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے کی وجہ سے ٹرانسپورٹر کئی گنا زیادہ کرایہ وصول کرتے رہے دوسری جانب بازاروں میں خریداروں کا رش دیکھ دکانداروں نے بھی اشیائے ضروریہ کی قیمتیں بڑھا دیں بازار میں خواتین کی تعداد زیادہ ہونے کی وجہ سے اوباش افغانی اور مقامی بھی جوق در جوق موٹر سائیکلوں اور پیدل بازاروں میں مٹر گشت کرتے رہے خواتین کے ساتھ چھیڑ خانی کی شکایات بھی سامنے آئیں بازاروں میں سیکورٹی کا کوئی بندوبست تھا نہ ہی اوباشوں کو لگام دینے کیلئے پولیس کی نفری موجود تھی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صداقت محمود مٹھو

تبصرے

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں