فتح‌جنگ: عطائی ڈاکٹر کے غلط علاج کی وجہ سے بزرگ شخص موت سے ہمکنار

فتح جنگ (تحصیل رپورٹر) اٹک،ہمارے والد کا غلط علاج کر کے انہیں موت کے منہ میں دھکیل دیا گیاجعلی ڈاکٹر ایلو پیتھک ادویات دیتا رہا اورخون کی رپورٹ پر کینسر کا مرض بتا کر بھاری بھر کم بل بناتا رہا حالت خراب ہونے پر فرار ہو گیا نمبر اٹینڈ کرنا بھی گوارہ نہ کیا
عطائی ڈاکٹر مقصود آف ملک پور تحصیل فتح جنگ جو کہ بسال میں ہسپتال بنا کر بھی سادہ لوح افراد کے جان و مال سے کھلواڑ کر رہا ہے متاثرہ خاندان انصاف کے لئے ای ڈی او ہیلتھ اٹک کے دفتر پہنچ گیا
تفصیلات کے مطابق عقیل احمد خان ولد محمد اسحاق خان (مرحوم)ساکن میرا داخلی گھکھڑ تحصیل فتح جنگ ضلع اٹک نے ای ڈی او ہیلتھ اٹک کو درخواست دی کہ میرے والد محمد اسحاق خان جو کہ بیمارہوئے تو ڈاکٹر مقصود جو کہ خود کو فزیشن اور سرجن ظاہر کرتا ہے اور اپنے پیڈ پر بھی لکھ رکھا ہے نے دعویٰ کیا کہ انہیں کینسر ہے میں علاج کروں گا تو آرام آئے گا لیکن اکراخراجات زیادہ ہوں گے جس پر ہم نے اس سے اپنے والد کا علاج کروانا شروع کر دیا –
عطائی ڈاکٹر مقصود نے 2ماہ سے زائد عرصہ میرے والد کا علاج کیا اور ایک دن چھوڑ کر دوسرے دن وہ ہمارے گھر میرا داخلی گھکھڑ تحصیل فتح جنگ آتا اور ایلوپیتھک انجکشن لگاتا گولیاں اور ایلوپیتھک ہی ڈرپ چڑھاتا رہااور ہم سے مبلغ4لاکھ روپے سے زائدوصول کر لئے لیکن میرے والد کی صحت بہتر ہونے کی بجائے مزید خراب ہونے لگی اور ان کا ایک بازو کام ہی چھوڑ گیا جس پر ہم نے عطائی ڈاکٹر مقصود سے پوچھا کہ تم کونسی میڈیسن استعمال کر رہے ہو جس پر اس نے ہمیں اپنے پیڈ پر ادویات لکھ دیں اور ساتھ بل بھی بنا دیئے۔ہمیں شدید تشویش ہوئی تو ہم نے مورخہ07-09-2016سیکرٹری ڈسٹرکٹ کوالٹی کنٹرول بورڈ اٹک کو دی جب ہمارے والد کی طبیعت زیادہ بگڑی تو ہم نے عطائی ڈاکٹر مقصود کو فون کیا کہ وہ چیک کرے اور بتائے کہ ان کو کیا مسئلہ ہے تو اس پر وہ نمبر اٹینڈ کرنا چھوڑ گیا اور سامنے آنے سے بھی گریز کرنے لگا ہم نے جب اپنے والد کو فتح جنگ شہر میں ڈاکٹرکو چیک کروایا تو انہوں نے ان کو لاعلاج بتایا اور مورخہ25-09-2016کو انکی وفات ہو گئی عطائی ڈاکٹر مقصود کے بارے میں ہمیں بعد میں علم ہوا کہ وہ ہومیو ڈاکٹر ہے لیکن اس نے خود کو فزیشن اور سرجن ظاہر کیا اور ایلوپیتھک ادویات ہی استعمال کرواتا رہا اور ہمارے والد کو علاج کی بجائے انہیں موت کے منہ میں پہنچا دیا ہمارے ساتھ انصاف کیا جائے اور عطائی ڈاکٹر مقصود کے خلاف فوری محکمانہ کاروائی کرتے ہوئے قرار واقعی سزا دی جائے۔

تبصرے

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں