پاکستان آرمی کا آپریشن خیبر چہارم:13 دہشت گرد ہلاک ،ایک فوجی شہید

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ( آئی ایس پی آر ) کےڈائریکٹر جنرل ، میجر جنرل آصف غفور کے ایک بیان کے مطابق وادی راجگال میں دہشت گردوں کے خلاف کارروائی منصوبہ بندی کے مطابق جاری ہے اور پاک فوج کے دستوں نے پیش قدمی جاری رکھی ہوئی ہے۔ اسپیشل سروسز گروپ نے اس وادی کا 90 مربع کلومیٹر کا علاقہ دہشت گردوں سے خالی کروا لیا ہے۔

پاکستان آرمی نے وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے خیبرایجنسی کی وادی راجگال میں جاری آپریشن خیبر چہارم کے دوران میں تیرہ دہشت گردوں کو ہلاک کر دیا ہے جبکہ ایک فوجی جوان شہید ہوگیا ہے۔

آئی ایس پی آر نے اپنے بیان میں بتایا ہے کہ سکیورٹی فورسز کے ساتھ جھڑپوں اور فضائی حملوں میں تیرہ دہشت گرد ہلاک اور چھے زخمی ہوگئے ہیں۔دہشت گردوں سے فائرنگ کے تبادلے میں پاک فوج کا ایک سپاہی عبدالجبار شہید ہو گیا ہے۔

پاکستان آرمی نے وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے خیبر ایجنسی کی وادی راجگال میں آپریشن رد ّالفساد کے تحت دہشت گرد وں کے خلاف گذشتہ اتوار کو خیبر4 کے نام سے یہ نئی کارروائی شروع کی تھی۔ پاک فوج نے اس سے قبل افغان فورسز کو اس کے بارے میں آگاہ کردیا تھا اور کہا تھا کہ اگر افغان آرمی سرحد کے اپنی جانب دہشت گردوں کے خلاف اس کارروائی میں معاونت کرنا چاہتی ہے تو وہ ایسا کرسکتی ہے ۔

اب تک آپریشن کے دوران میں دہشت گردوں کی متعدد بارودی سرنگیں ناکارہ بنا دی گئی ہیں اور پاک فضائیہ کے لڑاکا طیاروں یا پاک فوج کے طیاروں نے فضائی حملوں میں ان کے کئی ٹھکانے بھی تباہ کر دیے ہیں۔

تبصرے

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں