قطر پر پابندی کے 50 دن بعد قطریوں پر کیا بیت رہی ہے؟

قطر پر عرب ممالک کی پابندی کے 50 دن پورے ہو چکے ہیں۔
پانچ جون کو سعودی عرب، بحرین، مصر اور متحدہ عرب امارات (یو اے ای) نے قطر پر شدت پسند تنظیموں کو فنڈز فراہم کرانے کا الزام لگاتے ہوئے سفارتی تعلقات توڑ لیے تھے اور اپنے زمینی اور فضائی راستے بھی اس کے لیے بند کر دیے تھے۔
اس کے بعد سے کئی بار مختلف اطراف سے ان کے تعلقات کو استوار کرنے کی کوششیں بھی ہوئیں لیکن حالات جوں کے توں رہے۔ یہ پہلی بار نہیں ہے کہ قطر کے پڑوسی ممالک نے اس کی خارجہ پالیسی پر برہمی کا اظہار کیا ہو۔
عرب ممالک کی جانب سے پابندی کے 50 دن پورے ہونے پر سوشل میڈیا پر بھی بحث جاری ہے۔ قطر میں FiftyDaysSinceTheSiege# ٹاپ ٹرینڈ ہے۔
قطری شہری خلیجی ممالک کی پابندیوں کے باوجود مثبت رجحان رکھنے اور متحد ہونے پر خوشی ظاہر کر رہے ہیں۔
بن جاسم لکھتے ہیں ‘قطر کے لوگوں نے اپنے ملک کے لیے وفاداری اور محبت دکھاتے ہوئے عظیم مثال قائم کی ہے۔’
WoLFAlkuwari@ ہینڈل سے لکھا گیا ‘نفرت کرنے والے ہم سے جلتے رہیں گے، کیونکہ وہ ہماری طرح نہیں ہو سکتے۔’
سارہ لکھتی ہیں ‘پابندیوں کے 50 دن پورے ہو گئے ہیں اور قطر اب بھی مضبوطی سے کھڑا ہے۔’
قطر سے قطع تعلق کے نتیجے میں کیا کچھ داؤ پر ہے؟
iineeyy@ کی جانب سے لکھا گیا ‘ہم اپنے ملک کی خاطر کسی بھی چیز سے نمٹ سکتے ہیں۔ کیونکہ جس ملک کا ہم دفاع نہیں کر سکتے، ہمیں وہاں رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔’
نور کا کہنا ہے ‘ہمیں فخر ہے کہ ہم قطری ہیں اور جو لوگ بھی قطر کے ساتھ کھڑے ہیں، ہمیں ان پر فخر ہے۔’
alhajri1101@ لکھتے ہیں ‘قطر کی تاریخ میں پہلی بار ہم نے مسلسل 50 دنوں تک اپنا قومی دن منایا۔’
متعلقہ عنوانات

تبصرے

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں